Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

دیگر اسلامی بھائیوں میں بَہُت کم دیکھی ۔ اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۸۷)کبھی کبھار خوش طَبْعی بھی فرماتے

          مرکزالاولیاء(لاہور)کے اسلامی بھائی محمد اجمل عطّاری کا بیان ہے کہ محبوبِ عطّارحاجی زم زم رضاعطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری اگرچِہ سنجیدہ اور زَبان وآنکھ کے قفلِ مدینہ کے زبردست عامِل تھے مگر حسبِ ضَرورت وحسبِ موقع خوش طبعی بھی فرماتے تھے ، یِہی وجہ ہے کہ ان کی صحبت میں رہنے والا بور نہ ہوتا تھا۔ بعض اوقات میں ان کو فون کرتا تو ان کے تینوں بچّوں کے نام لے کر یوں مخاطب کرتا : یَا اَبَاالْجُنَیْدِ وَالْجِیْلَانِ وَ الْاُسَیْدِ کَیْفَ الْحَال ،(یعنی ا ے جُنید،  جِیلان اور اُسید کے ابُّو! کیا حال ہے؟) تو بہت خوش ہوتے۔ایک بارمیں نے جب صرف یہ کہا : یَا اَبَاالْجُنَیْدِ وَالْجِیْلَانِ! تو جواباً فرمایا : کیوں بھائی !آپ نے ہمارے تیسرے مُنّے کا نام کیوں نہیں لیا ؟ ہمارے اُسَید رضا کو کیوں چھوڑ دیا۔میں ان کی بات پر مسکرا دیا۔

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۸۸)بات نہ ماننے پر ناراض نہیں ہوئے

          زم زم نگرحیدرآباد (باب الاسلام سندھ) کے اسلامی بھائی ارسلان احمد عطّاری


 

 



Total Pages: 208

Go To