Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

عَزَّوَجَلَّ! حاجی زم زم کے دم کی بَرَکت سے میرا پُرانا مَرَض جاتا رہا اور تادمِ تحریر (یعنی ۱۴۳۳ھ میں)  6سال ہوچکے ہیں لیکن مجھے دوبارہ دردِ سر نہیں ہوا ۔ اللہ عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔ ٰ امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمینصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

بیمار! کیوں مایوس ہے توحُسنِ یقیں سے

دَم جاکے کرالے کسی بیمارِ نبی سے(وسائلِ بخشش ص۲۰۱)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۸۲)غمزدوں کی دلجوئی

          مبلغِ دعوتِ اسلامی ورکن شوریٰ،حاجی محمد علی عطاری مدظلہ العالی کا بیان کچھ یوں ہے کہ حاجی زم زم رضا عطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری فیضانِ مدینہ حیدر آباد میں موجودَگی کی صورت میں حتَّی المقدورعَصْر تا عشاء تعویذاتِ عطاریہ کے بستے پر آنے والے غمزدوں اور پریشان حالوں سے ملاقات کرکے ، ان کی دل جوئی وغم خواری کرتے ، ان سے تعزیت کرتے اور انفرادی کوشش فرماتے ۔ایک اور اسلامی بھائی کا بیان ہے کہ میں نے بارہا دیکھا کہ حاجی زم زم رضا عطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری تعویذاتِ عطاریہ کے بستے پر تشریف لاتے تو وہاں کسی نہ کسی مریض کے ساتھ بیٹھ کر اس کی دلجوئی فرماتے رہتے تھے۔ کئی مرتبہ اس کُڑھن کا اظہار فرماتے کہ اگر تمام تنظیمی ذمّے داران ایسے اسلامی بھائیوں پر انفرادی کوشش کیاکریں توبِحَمدہٖ تعالٰیبَہُت سارے اسلامی بھائی مَدَنی قافلے کے


 

 



Total Pages: 208

Go To