Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

انہوں نے نہ صرف میری ڈھارس بندھائی بلکہ میرا مسئلہ حل کرنے کی بھی ترکیب فرمائی ۔ اس کے بعد بھی حاجی زم زم رضاعطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباریمجھ سے گاہے بگاہے معلومات لیتے رہتے اور مدنی کاموں بالخصوص مدنی انعامات کا جذبہ دلاتے رہتے ۔ اَ لْحَمْدُللّٰہعَزَّوَجَلَّ! یہ بیان دیتے وقت (محرم الحرام۱۴۳۴ھ)میں جامعۃ المدینہ فیضان مدینہ (حیدر آباد ) میں دورۂ حدیث کا طالب العلم ہوں اور جامعات المدینہ حیدر آباد میں مدنی انعامات کی دُھومیں مچانے کے لئے کوشاں ہوں۔ اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۸۰)دُکھیاروں کی حاجت روائی کی جھلکیاں

          دعوتِ اسلامی کی مجلس، المدینۃ العلمیۃ کے مَدَنی اسلامی بھائی کا بیان ہے کہ میں نے خود کئی مرتبہ حاجی زم زم رضا عطّاریعَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری کو دکھیاروں کی حاجت روائی کرتے ہوئے دیکھا ہے ۔چند مثالیں عرض کرتا ہوں :* ایک مرتبہ ایک نومسلم کو سات یا آٹھ ہزار روپے پیش کئے * ایک مَدَنی اسلامی بھائی کا(دعوتِ اسلامی کے جامعۃ المدینہ کے فارغ التحصیل طلباء’’مدنی‘‘کہلاتے ہیں ) تقریباً 8000کا قرض بِغیرمُطالَبے کے چُکایا۔*ایک اور مَدَنی اسلامی بھائی کو بِلا مُطالَبہ تقریباً 32000 قرض کی ادائیگی کے لئے پیش کئے ۔ *چند سال پہلے میرا کچھ زمین خریدنے کا ذِہْن


 

 



Total Pages: 208

Go To