Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

(۷۸)ولیمے میں زیادہ رقم دلوائی

          دعوتِ اسلامی کے ایک تنظیمی ذمّے دار کا بیان ہے کہ ایک مرتبہ میں اور حاجی زم زم رضا عطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری کسی اسلامی بھائی کے ولیمے میں جارہے تھے ۔میری چُونکہ ان سے تھوڑی بے تکلُّفی تھی ،اس لئے مجھ سے دریافت کیا کہ آپ نے’’ سلامی‘‘ میں کتنی رقم دولہا کو پیش کرنے کی نیّت کی ہے ؟جب میں نے رقم بتائی تو ترغیباً ارشاد فرمایا کہ بے چارے مالی طور پر کمزور ہیں اور جن حالات میں انہوں نے شادی کی ہے مجھے معلوم ہے،اگر ہوسکے تو آپ کچھ زیادہ رقم پیش کردیجئے ۔چُنانچِہ میں نے انہی سے مشورہ کرکے سلامی کی رقم دُگنی کردی اور لفافے میں ڈال کر دولہا کوپیش کردی ۔ اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۷۹)شاید میں جامعہ چھوڑ دیتا

          جامعۃ المدینہ فیضانِ مدینہ زم زم نگر حیدر آباد کے دورۂ حدیث کے طالب العلم حیدر رضا عطّاری کے بیان کا لُبِّ لباب ہے کہ میں جس وقت درسِ نظامی کے درجۂ ثالثہ میں تھا تو مجھے کچھ ایسی ذاتی پریشانیاں پیش آئیں کہ مجھے لگتا تھا کہ شاید پڑھنے کا سلسلہ موقوف کرنا پڑے گا ۔ اس وقت میں نے مَدَنی انعامات کے تاجدار ، محبوبِ عطّارحاجی زم زم رضاعطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری  سے اپنی پریشانی کا ذکر کیا تو


 

 



Total Pages: 208

Go To