Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

(۷۶)جامِعۃُ الْمدینہ کے طالبُ العلم کی خیرخواہی

           جامعۃ المدینہ فیضان مدینہ آفندی ٹاؤن حیدرآبادکے ایک طالب العلم کا بیان کچھ یوں ہے کہ میں جامعۃ المدینہ کے امتحان دے رہا تھا کہ اچانک میرا بلڈ پریشر Low ہوگیاجس پر میں استاذ صاحب سے اجازت لے کر جوس وغیرہ لینے کے لئے فیضان مدینہ کی سیڑھیوں سے اُتر رہا تھا کہ محبوبِ عطّار حاجی زم زم رضا عطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری تشریف لاتے ہوئے نظر آئے۔ انہوں نے میری خیریت دریافت کی تو میں نے انہیں بتایا کہ میرا بلڈ پریشرLowہورہا ہے۔ انہوں نے فرمایا : آپ باہَر نہ جائیں بلکہ جامِعہ میں جاکر آرام کر لیں میں کچھ کرتا ہوں۔میں حسبِ ارشاد جامعہ میں آرام کرنے کے لئے چلا گیا۔تھوڑی ہی دیر بعد حاجی زم زم رضا عطاریعلیہ رحمۃُ اللہِ الباری نے جوس اور گلوکوز منگوا کر مجھے بھیجا جو میں نے پی لیا ۔پھر آپ خود میری عیادت کے لئے تشریف لے آئے اور فرمایا : ’’افاقہ ہوتے ہی مجھے بتا دیجئے گا۔‘‘اس طالب علم کا کہنا ہے کہ میں ان کے اس انداز سے بہت متأَثِّر ہوا ۔

اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۷۷)بیماری کے عالَم میں بھی محروم نہیں لَوٹایا

          دعوتِ اسلامی کی’’ مجلسِ اِصلاح برائے قیدیان ‘‘کے پاکستان سَطْح کے


 

 



Total Pages: 208

Go To