Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

تشویش میں ہوں تو اپنے پاس موجود بسکٹ ، جوس اور سلائس وغیرہ میرے پاس لے آئے اور سحری کے لئے پیش کردئیے، میں نے بُہتیرا منع کیا مگر ان کے مَحَبَّت بھرے اصرار پر مجھے وہ چیزیں لینی پڑیں ، یوں حاجی زم زم رضا رحمۃُ اللہ تعالٰی علیہ  نے بیماری کی حالت میں بھی میری خیرخواہی فرمائی ۔

اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۷۵)اپنا لِحاف مجھے پیش کردیا

          مجلسِ خُصوصی اسلامی بھائی کے ایک ذمّے دار اسلامی بھائی محمد یاسِر عطاری کے بیان کا لُبِّ لُباب ہے کہ ایک مرتبہ بابُ الاسلام (سندھ پاکستان)سے مرکز الاولیاء ملتان شریف(پنجاب پاکستان)میں مَدَنی مشورے میں حاضری ہوئی ،مَدَنی مشورے کے اختِتام پر محبوبِ عطّار رکن شوریٰ حاجی زم زم رضا عطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری نے مجھ سے دریافت فرمایا: آپ اپنا بچھونا ساتھ لائے ہیں ؟ میں نے نَفی میں جواب دیا ۔اِصرار کر کے فرمانے لگے :آپ میرا لِحاف لے لیجئے۔اس کے علاوہ بھی ان کی دیگر شفقتوں نے مجھے بہت متأثر کیا ،وہ دن اور آج کا دن ہے میں خُصوصی اسلامی بھائیوں میں مَدَنی کاموں کی دُھومیں مچانے میں مصروف ہوں۔

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد


 

 



Total Pages: 208

Go To