Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

معلومات کیا کرتے ۔باپا سے دعا کی درخواست کرتے ، شہزادۂ عطّار حضرت مولانا الحاج ابو اُسید عُبیدرضا مَدَنی مدظلہ العالی سے دعا کرواتے، ان سے فون پر میری بات کروادیتے۔ آخِری مرتبہ میرے بیٹے کی عیادت کے لئے تشریف لائے تو میرے بیٹے کو پنسل تحفے میں پیش کی تھی ۔ الغرض حاجی زم زم رضا عطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری سگے بھائیوں کی طرح میری دلجوئی کیا کرتے تھے ۔ان کے جانے کے بعد میں گویا تنہارہ گیا ہوں۔ اللہ تعالیٰ ان پر اپنی رحمت ورضوان کی بارشیں برسائے ۔  ٰ امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمینصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۷۱)میری عِیادت کے لئے سب سے زیادہ فون انہوں نے کئے

          مبلغِ دعوتِ اسلامی ورکن شوریٰ،ابوبلال محمد رفیع عطاری مدظلہ العالی  کا بیان ہے کہ میں کم وبیش ایک سال پہلے (1432ھ) میں ہیپاٹائٹس cکے مَرَض میں مبتَلاء ہوا تو میری عِیادت ودلجوئی کے لئے مختلف اسلامی بھائیوں نے فون کئے مگر سب سے زیادہ فون حاجی زم زم رضا عطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری نے کئے ۔

اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد


 

 



Total Pages: 208

Go To