Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

غمِ مصطَفٰے جس کے سینے میں ہے

گو کہیں بھی رہے وہ مدینے میں ہے

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۶۷)اُسے غوث پاکرحمۃُ اللہ تعالٰی علیہ کی زیارت ہوئی تھی

          زم زم نگر حیدر آباد کے اسلامی بھائی محمد انیس عطّاری کا بیان ہے کہ حاجی زم زم رضا عطاری علیہ رحمۃُ اللہِ الباریبہت ملنسار ،نرم خُو،برد بار،اچھی عادتوں والے،انتہائی سنجیدہ طبیعت ،مُعاملہ فہم اور کافی ذہین تھے ۔ ہر کسی کے لئے اچّھے جذبات اور مَدَنی سوچ کے حامل تھے ۔امیر اہلسنّت دامت برکاتہم العالیہ کی صحبتِ بابرکت کا ان کو ایسا فیضان ملا تھا کہ ایک اسلامی بھائی سے حاجی زم زم رضا عطاریعلیہ رحمۃُ اللہِ الباری کی ملاقات ہوئی توآپ کی نظر ان کے چہرے پر پڑی ، فرمایا: ’’آپ کے چہرے سے ایسا لگتا ہے کہ رات آپ کو بہت اچّھی زیارت ہوئی ہے ۔‘‘ وہ اسلامی بھائی حیران ہوگئے اور جواب دیا: اَلْحَمْدُللّٰہ عَزَّوَجَلَّ! مجھے رات حُضور غوث پاک  رحمۃُ اللہ تعالٰی علیہ کی زیارت ہوئی ہے ۔ اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد


 

 



Total Pages: 208

Go To