Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

نہیں گئے اور یوں حاجی زم زم رضاعطاریعلیہ رحمۃُ اللہِ الباری چل مدینہ ہونے کے باوُجُود سبز گنبد دیکھے بِغیر وطن واپَس آگئے !

نظر بھرکر تو دیکھ لوں میں گنبدِ خضرا

پئے شیخین اس قابِل بنانا یارسولَ اللہ

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

مشہور عاشقِ رسول علّامہ یوسُف بن اسمٰعیل نَبْہَانی کا اندازِادب

          میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! حاجی زم زم عطاریعَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری کی اس ادا میں عاشقِ رسول علّامہ یوسُف بن اسمٰعیل نَبْہَانی عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الغَنِیکارنگ جھلکتا ہے ، چنانچہ دعوتِ اسلامی کے اشاعتی ادارے مکتبۃ المدینہ کی مطبوعہ 328صفحات پر مشتمل کتاب ’’عاشِقان رسول کی 130حکایات ‘‘کے صفحہ 149پرہے: خلیفۂ اعلیٰ حضرت ،فقیہ ِاعظم ،حضرتِ علّامہ ابو یوسف محمد شریف مُحدِّثِ کوٹْلَوی عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہ ِالْقَوِیفرماتے ہیں: ایک مرتبہ جب میں حج کرنے گیا تو مدینۂ منوَّرہ زَادَھَا اللہُ شَرَفاً وَّ تَعْظِیْماً کی حاضِری میں سبز سبز گنبد کے دیدار سے مُشَرَّف ہوتے وَقْت میں نے ’’بابُ السَّلام ‘‘کے قریب اور گنبدِ خضراء کے سامنے ایک سفید رِیش اور انتِہائی نورانی چِہرے والے بُزُرْگ کو دیکھا جو قبرِ انور کی جانب منہ کرکے دو زانو بیٹھے کچھ پڑھ رہے تھے۔ معلوم کرنے پر پتا چلا کہ یہ مشہورو معروف عالمِ دین اورزبردست عاشقِ رسول حضرتِ سیِّدُنا شیخ یوسُف بن اسمعٰیل نَبْہَانی   قُدِّسَ سِرُّہُ الرَّبَانِی ہیں۔میں ان کی وَجاہت

 



Total Pages: 208

Go To