Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

رکھا تھاجبکہ ان کی کنیت ابو جُنید تھی ۔ حاجی زم زم رضا عطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری ترقّی کرتے کرتے ۱۵ رَمَضانُ المبارَک۱۴۲۵ھ بمطابق 30اکتوبر2004ء کو دعوتِ اسلامی کی مرکزی مجلسِ شوریٰ کے رُکن بن گئے اورسالہا سال تک مَدَنی کاموں کی دُھومیں مچائیں ، پھرمِعدے کے مَرَض میں مبتَلاہوئے اور طویل عَلالت کے بعدہِجری سن کے اعتبار سے تقریباً48سال6ماہ8دن اس دنیائے فانی میں گزارنے کے بعد۲۱ ذوالقعدہ ۱۴۳۳ھ بمطابق8اکتوبر2012ء کو پیر اور منگل کی درمیانی شب تقریباً 11بج کر 45منٹ پرباب المدینہ کراچی میں انتِقال فرما گئے ۔اِنَّا لِلہِ وَاِنَّآ اِلَیْہِ رٰجِعُوْنَ

اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

نکاح واولاد

          مَدَنی انعامات کے تاجدار ،محبوبِ عطّارحاجی زم زم رضاعطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری کی اپنے وصال سے کم وبیش 21برس پہلے بابُ الاسلام پاکستان کے مشہور شہرحیدر آبادمیں شادی ہوئی، دوبیٹیاں تھیں جن کی انہوں نے اپنی زندگی میں شادی کردی تھی ،جبکہ تقریباً15سال کا بڑا شہزادہ بوَقْتِ وفات جامعۃ المدینہ(حیدر آباد)میں

 



Total Pages: 208

Go To