Book Name:Qoot ul Quloob Jild 1

اتوار کے دن نماز کی فضیلت: 

            حضرت سیِّدُنا ابو ہریرہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ  سے  مروی ہے کہ رسولوں   کے سالار صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کا فرمانِ خوشبو دار ہے: ’’جس نے اتوار کے دن چار رکعت ادا کیں   اور ہر رکعت میں   سورہ فاتحہ کے بعد  (اٰمَنَ الرَّسُوْلُ)  ایک مرتبہ آخر تک پڑھی تو اللہ عَزَّ وَجَلَّ اس کے لئے ہر نصرانی مرد و عورت کی تعداد کے برابر نیکیاں   لکھ دیتا ہے اور اسے  ایک نبی جیسا ثواب عطا فرماتا ہے اور ایک حج اور عمرہ کا اور ہر رکعت کے بدلے ایک ہزار نمازوں   کا ثواب بھی عطا فرماتا ہے،   نیز اللہ عَزَّ وَجَلَّ  اسے  ہر حرف کے بدلے جنت میں   مشک و اذفر کا  (یعنی انتہائی تیز خوشبو والا)  ایک شہر بھی عطا فرمائے گا۔ ‘‘   ([1])

حالتِ نصاریٰ سے  چھٹکارے کی نماز: 

            امیر المومنین حضرت سیِّدُنا علی المرتضیٰ کَرَّمَ اللہُ تَعَالٰی وَجْہَہُ الْکَرِیْم سے  مروی ہے کہ مَخْزنِ جودوسخاوت،   پیکرِ عظمت و شرافت صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کا فرمانِ فضیلت نشان ہے :  ’’ اتوار کے روز کثرتِ نماز کے ذریعے اللہ عَزَّ وَجَلَّ کی وحدانیت کا تذکرہ کیا کرو،   کیونکہ اللہ عَزَّ وَجَلَّ   اکیلا ہے اس کا کوئی شریک نہیں  ۔ پس جو اتوار کے دن نمازِ ظہر کے فرض ادا کرنے کے بعد چار رکعت نفل ادا کرے اور پہلی رکعت میں   سورۂ فاتحہ کے بعد سورۂ سجدہ اور دوسری میں   فاتحہ کے بعد سورۂ ملک پڑھے،   پھر تشہد پڑھے اور سلام پھیر دے۔ پھر کھڑا ہو کر دوسری دو رکعتیں   ادا کرے جن میں   سورۂ فاتحہ کے بعد سورۂ جمعہ پڑھے اور اللہ عَزَّ وَجَلَّ سے  اپنی کسی حاجت کا سوال کرے تو اللہ عَزَّ وَجَلَّ پر حق ہے کہ وہ اس کی حاجت پوری فرمائے اور نصاریٰ جس حالت پر ہیں   اسے  اس سے  بری فرما دے۔ ‘‘   ([2])

پیر کے دن نمازکی فضیلت: 

        حضرت سیِّدُنا جابر رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ  سے  مروی ہے کہ مہرِ رِسالت،   منبعِ جود وسخاوت صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کا فرمانِ مغفرت نشان ہے: ’’جو شخص پیر کو دن چڑھے دو رکعت نفل ادا کرے اور ہر رکعت میں   سورۂ فاتحہ کے بعد ایک مرتبہ آیت الکرسی،   ایک مرتبہ  (قُلْ هُوَ اللّٰهُ اَحَدٌۚ (۱) )  اور ایک ایک مرتبہ سورۂ فلق اور سورۂ ناس پڑھے،   جب سلام پھیرے تو دس مرتبہ استغفار اور دس مرتبہ درودِ پاک پڑھے تو اللہ عَزَّ وَجَلَّ اس کے تمام گناہ معاف فرما دیتا ہے۔ ‘‘  ([3])

        حضرت سیِّدُنا انس بن مالک رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ  سے  مروی ہے کہ شفیعِ روزِ شُمار صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کا فرمانِ خوشبودار ہے: جو پیر کے دن بارہ رکعت نوافل ادا کرے اور ہر رکعت میں   سورۂ فاتحہ کے بعد ایک بار آیت الکرسی پڑھے،   پھر نماز کے بعد بارہ مرتبہ  (قُلْ هُوَ اللّٰهُ اَحَدٌۚ (۱) )   (سورۂ اخلاص)  اور بارہ مرتبہ اَسْتَغْفِرُ اللّٰہ پڑھے تو قیامت کے دن ندا دی جائے گی: ”فلاں   بن فلاں   کہاں   ہے؟“ تا کہ وہ اللہ   عَزَّ وَجَلَّ سے  اپنا ثواب حاصل کر لے اور جو سب سے  پہلا ثواب اسے  دیا جائے گا وہ ایک ہزار حلے ہوں   گے اور اسے  تاج پہنایا جائے گا اور کہا جائے گا جنت میں داخل ہو جا،   جہاں   ایک لاکھ فرشتے اس کا استقبال کریں   گے جن میں   سے  ہر ایک کے پاس ہدیہ ہو گا،   وہ اسے  پیش کریں   گے یہاں   تک کہ وہ روشن نور والے ایک ہزار محلات کی سیر کرے گا۔  ([4])

منگل کے دن نمازکی فضیلت: 

        حضرت سیِّدُنا انس بن مالک رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ  سے  مروی ہے کہ نبی ٔ مکرم ،   نورِ مجسم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کا فرمانِ رحمت نشان ہے: ’’جو منگل کے دن دو پہر کے وقت دس رکعتیں   پڑھے اور ہر رکعت میں   سورۂ فاتحہ کے بعد ایک مرتبہ آیت الکرسی اور تین مرتبہ  (قُلْ هُوَ اللّٰهُ اَحَدٌۚ (۱) )   پڑھے تو 70 دن تک اسکی کوئی خطا نہیں   لکھی جائے گی،   اگر وہ ان 70 دنوں   میں   فوت ہو جائے تو اسے  شہید لکھا جائے گا اور اسکے 70 سال کے گناہ معاف کر دیئے جائیں   گے۔ ‘‘   ([5])

بدھ کے دن نمازکی فضیلت: 

        حضرت سیِّدُنا معاذ بن جبل رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ  سے  مروی ہے کہ سُلْطَانُ الْمُتَوَکِّلِیْن،  رَحْمَۃٌ لِّلْعٰلَمِیْن صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کا فرمانِ دلنشین ہے: جو بدھ کو دن چڑھے بارہ رکعت نفل ادا کرے جن میں   سورۂ فاتحہ کے بعد تین بار   (قُلْ هُوَ اللّٰهُ اَحَدٌۚ (۱) )   اور تین تین بار سورۂ فلق اور سورۂ ناس پڑھے تو عرش سے  ایک فرشتہ پکارتا ہے: ’’اے اللہ عَزَّ وَجَلَّ کے بندے! نئے سرے سے  اپنے عمل شروع کر دے کہ تیرے گزشتہ تمام گناہ معاف کر دیئے گئے ہیں۔ ‘‘  اور اللہ عَزَّ وَجَلَّ اس سے  قبر کا عذاب،   اس کی تنگی وتاریکی دور فرما دیتا ہے اور اس سے  قیامت کی سختیاں   بھی دور فرما دی جاتی ہیں  ،   نیز اس کے لئے اس روز کا ثواب ایک نبی کے عمل کی مقدار اٹھایا جاتا ہے۔  ([6])

جمعرات کے دن نمازکی فضیلت: 

                حضرت سیِّدُنا ابن عباس رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُمَا سے  مروی ہے کہ شہنشاہِ اَبرار صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کا فرمانِ تقرب نشان ہے:  ’’جو جمعرات کے دن ظہر اور عصر کے درمیان دو رکعتیں   ادا کرے،   پہلی رکعت میں   سورۂ فاتحہ کےبعد  (100)  مرتبہ آیت الکرسی اور دوسری میں (100)  مرتبہ   (قُلْ هُوَ اللّٰهُ اَحَدٌۚ (۱) ) پڑھے اور پھر  (100)  مرتبہ درود پاک پڑھے تو اللہ عَزَّ وَجَلَّ اسے  اس شخص کے برابر ثواب دیتا ہے جس نے رجب،   شعبان اور رمضان کے روزے رکھے ہوں   اور اس کے لئے بیت اللہ شریف کا حج کرنے والے کی مثل ثواب ہے،   نیز



[1]     اتحاف السادة المتقين، کتاب اسرار الصلاة، الباب السابع، القسم الثانی، ج۳، ص۶۱۷

[2]     اتحاف السادة المتقين، کتاب اسرار الصلاة، الباب السابع، القسم الثانی، ج۳، ص۶۱۹

[3]     المرجع السابق، ص۶۱۷

[4]     اتحاف السادة المتقين، کتاب اسرار الصلاة، الباب السابع، القسم الثانی، ج۳، ص۶۲۱

[5]     المرجع السابق، ص۶۲۲

[6]     المرجع السابق، ص۶۲۳



Total Pages: 332

Go To