Book Name:Qoot ul Quloob Jild 1

سبقت لے گئے ہیں  ۔ چنانچہ ایسے  افراد کی مثال دیتے ہوئے اللہ عَزَّ وَجَلَّنے ارشاد فرمایا: 

وَ لَكُمُ الْوَیْلُ مِمَّا تَصِفُوْنَ (۱۸)  (پ۱۷،  الانبیآء:  ۱۸)

تر جمعہ ٔ کنز الایمان: اور تمہاری خرابی ہے ان باتوں   سے  جو بناتے ہو۔

            ایک مقام پر ارشاد فرمایا:

كُلَّمَاۤ اَضَآءَ لَهُمْ مَّشَوْا فِیْهِۗۙ-وَ اِذَاۤ اَظْلَمَ عَلَیْهِمْ قَامُوْاؕ- (پ۱،  البقرۃ:  ۲۰)

تر جمعہ ٔ کنز الایمان: جب کچھ چمک ہوئی اس میں   چلنے لگے اور جب اندھیرا ہوا کھڑے رہ گئے۔

            یعنی وہ ایسا شخص ہے جو شبہات کی تاریکیوں   میں   مبتلا ہونے کے سبب ان تمام امور میں   بصیرت سے  کام نہیں   لیتا جن میں   علمائے کرام رَحِمَہُمُ اللہُ السَّلَام کا اختلاف پایا جاتا ہے اور نہ ہی اپنے وجدان سے  معاملہ کی حقیقت تک رسائی حاصل کرتا ہے بلکہ دوسروں   کا وجدان پانے کی کوشش کرتا ہے۔ پس حقیقت میں   وجدان اور مشاہدہ کا تعلق اس  (شبہات کی تاریکیوں   میں   بھٹکنے والے)  شخص سے  نہیں   بلکہ دوسروں   سے  ہے۔ چنانچہ،   

            حضرت سیِّدُنا حسن رَحْمَۃُاللہِ تَعَالٰی عَلَیْہ فرماتے ہیں   کہ اللہ عَزَّ وَجَلَّ روایت بیان کرنے والے کسی شخص کی کوئی پروا نہیں   کرتا بلکہ وہ سوجھ بوجھ رکھنے والے شخص کی پروا کرتا ہے۔  ([1]) اور ایک مرتبہ ارشاد فرمایا کہ جس کے پاس نفع بخش عقل نہ ہو اس کا کثیر تعداد میں   احادیث روایت کرنا نفع نہیں   دیتا۔

            کسی دانا شخص نے اشعار کی صورت میں   کیا ہی خوبصورت بات کہی ہے:

رَاَیْتُ الْعِلْمَ عِلْمَیْنِ                                                                                                                                                                                                              فَمَسْمُوْ عٌ وَّ مَطْبُوْ عٌ

وَ لَا یَنْفَعُ مَسْمُوْ عٌ                                                                                                                                                                                                                       اِذَا لَمْ یَكُ مَطْبُوْ عٌ

كَمَا لَا تَنْفَعُ الشَّمْسُ                                                                                                                                                                                                        وَ ضَوْءُ الْعَیْنِ مَمْنُوْعٌ

تر جمعہ : میں  نے دوطرح کے ہی علم دیکھے ہیں  ،   ایک علم کا تعلق سماعت سے  ہے اور دوسرے کا طباعت سے  اور سنا ہوا علم اسی وقت فائدہ دیتا ہے جب کہ وہ لکھا ہوا بھی ہو۔ جس طرح کہ سورج کی روشنی اس وقت فائدہ نہیں   دیتی جب آنکھ کے لئے روشنی ممنوع ہو۔

            حضرت سیِّدُنا جنید بغدادی عَلَیْہِ رَحمَۃُاللہِ الْہَادِی اکثر یہ اشعار پڑھا کرتے تھے:

عِلْمُ التَّصَوُّفِ عِلْمٌ لَّیْسَ یَعْرِفُہٗ                                                                                                                                                            اِلَّاۤ اَخُو فِطْنَۃٍ ۢ بِالْحَقِّ مَعْرُوْفٌ

وَلَیْسَ یَعْرِفُہٗ مَنْ لَّیْسَ یَشْہَدُہٗ                                                                                                                                                  وَكَیْفَ یَشْہَدُ ضَوْءَ الشَّمْسِ مَكْفُوْفٌ

تر جمعہ : تصوف ایک ایسا علم ہے جسے  صرف حق کو سمجھنے والے اور نیک بندے ہی جانتے ہیں  ۔ جسے  مشاہدۂ حق نہ ہو وہ اس علم سے  آگاہ نہیں   ہو سکتا۔ ایک نابینا شخص سورج کی روشنی کیسے  دیکھ سکتا ہے؟

علوم کی تدوین: 

            اسلام کے ابتدائی زمانہ میں   یعنی پہلی اور دوسری صدی ہجری میں   لوگوں   کی جو حالت تھی وہ بعد میں   نہ رہی کیونکہ بعد میں   نہ صرف کتابیں   اور علوم کے مختلف مجموعے مرتب ہوئے بلکہ لوگوں   سے  منقول باتیں   بیان کی جاتیں  ،   ایک ہی امام کے مذہب کے مطابق فتویٰ دیا جاتا اور اس کے علاوہ لوگ ہر معاملے میں   ایک ہی امام کے قول کا قصد کرتے اور اس کے مذہب کے مطابق فقہی بصیرت حاصل کرتے۔ یہ کتب تمام صحابۂ کرام عَلَیْہِمُ الرِّضْوَان اور کبار تابعین عظام رَحِمَہُمُ اللہُ السَّلَام کے وصال کے بعد لکھی گئیں  ۔ چنانچہ،   

سب سے  پہلی اسلامی کتابیں  : 

            منقول ہے کہ سب سے  پہلے حضرت سیِّدُنا ابن جریج رَحْمَۃُاللہِ تَعَالٰی عَلَیْہنے مکہ مکرمہ زَادَھَا اللہُ شَرَفًا وَّ تَعْظِیْمًا میں   ایک کتاب تصنیف کی جو حضرت سیِّدُنا مجاہد،   حضرت سیِّدُنا عطا عَلَیْہِمَا رَحمَۃُاللہِ الْفَتَّاح اور حضرت سیِّدُنا ابن عباس رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُمَا کے دیگر شاگردوں   سے  منقول آثار و تفسیری اقوال پر مشتمل تھی۔ اس کے بعد یمن میں   حضرت سیِّدُنا معمر بن راشد صنعانی قُدِّسَ  سِرُّہُ النّوْرَانِینے ایک مجموعہ ترتیب دیا جس میں   انہوں  نے احادیثِ مبارکہ کو ابواب کے تحت جمع کیا۔ پھر مدینہ طیبہ زَادَھَا اللہُ شَرَفًا وَّ تَعْظِیْمًا   میں   حضرت سیِّدُنا مالک بن انس رَحْمَۃُاللہِ تَعَالٰی عَلَیْہنے فقہی موضوعات پر مؤطا شریف لکھی۔ پھر حضرت سیِّدُنا ابنِ عیینہ رَحْمَۃُاللہِ تَعَالٰی عَلَیْہنے ایک کتاب میں   تفسیری اقوال اور احادیثِ مبارکہ کو جمع کیا تو حضرت سیِّدُنا سفیان ثوری عَلَیْہِ رَحمَۃُاللہِ الْقَوِینے فقہی مسائل اور احادیثِ مبارکہ کو ’’الجامع الکبیر ‘‘  میں   جمع کیا۔

            یہ تمام کتب ۱۲۰ہجری کے بعد اس وقت تصنیف ہوئیں   جب حضرت سیِّدُنا سعید بن مسیب رَحْمَۃُاللہِ تَعَالٰی عَلَیْہ جیسے  بلند پایہ تابعین عظام رَحِمَہُمُ اللہُ السَّلَام دنیا سے  پردہ فرما چکے تھے۔ اس زمانے میں   بھی بعض علمائے کرام رَحِمَہُمُ اللہُ السَّلَام احادیثِ مبارکہ کو زبانی یاد کرنا زیادہ پسند کرتے اور فرماتے کہ’’جیسے  ہم نے زبانی یاد کیا تم بھی اسی طرح زبانی یاد کرو۔ ‘‘   ([2]) وہ ایسا اس لئے کہا کرتے تھے تا کہ لوگ لکھنے میں   مشغول ہو کر کہیں   اللہ عَزَّ وَجَلَّ کی یاد سے  غافل نہ ہو جائیں  ۔ یہی وجہ ہے کہ امیر المومنین حضرت سیِّدُنا ابو بکر صدیق رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ اور دوسرے بہت سے  بلند پایہ صحابۂ کرام عَلَیْہِمُ الرِّضْوَان قرآنِ کریم کی تدوین کے بارے میں   فر ماتے تھے کہ ’’ہم وہ کام کیسے  کریں   جو اللہ عَزَّ وَجَلَّکے پیارے حبیب صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ



[1]    ۔ تاریخ دمشق لابنِ عساکر، الرقم۵۵۹۰ فرج بن ابراھیم، ج۴۸، ص۲۵۳ عن ابو محمد حسن بن محمد الجریری( المتوفی ۳۱۲ھ  ، فھم بدلہ قلب۔  تاریخ بغداد، الرقم۲۶۴۸احمد بن محمد الحسب بن محمد،  ج۵، ص۱۹۸ روایۃ و فھم بدلھما حکایۃ و قلب

[2]    ۔ اتحاف السادۃ المتقین، کتاب العلم، الباب السادس فی آفات العلم، ج۱، ص۷۱۶



Total Pages: 332

Go To