Book Name:Qoot ul Quloob Jild 1

            پس پیکرِ حُسن وجمال صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمنے سوال پوچھنے والے کو دل کی سوجھ بوجھ کی طرف رجوع کرنے اور فتویٰ دینے والوں   کے فتووں   سے  رخ پھیرنے کا حکم ارشاد فرمایا کیونکہ دل اگر فقیہ نہ ہوتا تو آپ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کبھی بھی اس کی جانب رجوع کرنے کا حکم نہ دیتے۔ اسی طرح اگر علمِ باطن،   ظاہر پر حکم لگانے والا نہ ہوتا تو آپ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کبھی بھی اہلِ ظاہر یعنی علمائے لسان کے علوم سے  توجہ ہٹا کر علمِ باطن جو اہلِ قلوب کا علم ہے،   کی جانب رجوع کرنے کا نہ فرماتے۔ ایسا بھی نہیں   کہ آپ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمنے بلند پایہ فقیہ سے  کسی کو ہٹا کر اس کا رخ اس سے  کم تر فقیہ کی جانب کر دیا ہو اور ایسا کیونکر ہو سکتا ہے جبکہ آپ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمنے بڑے پختہ الفاظ میں   ارشاد فرمایا ہے:  ’’اپنے دل سے  فتویٰ طلب کیا کرو،   اگرچہ لوگ تجھے فتویٰ دیں  ،   اگرچہ وہ فتویٰ بھی دیں  ۔ ‘‘   ([1]) یہ حکم اس بندے کے لئے خاص ہے جس کے پاس دل ہو،   اسنے یہ حکم سن رکھا ہو،   اسے  شاہد کا مشاہدہ حاصل ہو،   وہ نفسانی خواہشات سے  خالی ہو کیونکہ فقہ زبان کی صفت نہیں    (بلکہ دل کی صفت ہے) ۔ کیا آپ نے اللہ عَزَّ وَجَلَّ کا یہ فرمانِ عالیشان نہیں   سنا؟

لَهُمْ قُلُوْبٌ لَّا یَفْقَهُوْنَ بِهَا٘- (پ۹،   الاعراف: ۱۷۹)

تر جمعہ ٔ کنز الایمان: وہ دل رکھتے ہیں   جن میں   سمجھ نہیں  ۔

            پس جس کا دل سمیع عَزَّ وَجَلَّ کو سننے والا اور شہید  (ہر چیز پر گواہ)  کا مشاہدہ کرنے والا ہو تو وہ پروردگار عَزَّ وَجَلَّ کا خطاب و کلام بھی سمجھ سکتا ہے۔ چنانچہ جب کوئی حکم سنتا ہے تو فوراً لبیک کہتے ہوئے متوجہ ہو جاتا ہے جس کا تذکرہ اللہ عَزَّ وَجَلَّنے اپنے اس فرمانِ عالیشان میں   کیا ہے:

لِّیَتَفَقَّهُوْا فِی الدِّیْنِ (پ۱۱،  التوبۃ: ۱۲۲)

تر جمعہ ٔ کنز الایمان: دین کی سمجھ حاصل کریں  ۔

            اس آیتِ مبارکہ سے  معلوم ہوا کہ فقہ سے  دو اوصاف ظاہر ہوتے ہیں  :

 (۱) … ڈرانا: یہ دعوۃ الی اللہ کے ایک مقام کا نام ہے کیونکہ ڈرانے والا وہی ہوتا ہے جو اللہ عَزَّ وَجَلَّ کے خوف سے  آگاہ کرے اور خوف وہی دلاتا ہے جس کا شمار خود بھی خائفین میں   ہو اور جو خائفین میں   سے  ہو وہی عالم ہوتا ہے۔

 (۲) … احتیاط و پرہیزگاری: یہ اللہ عَزَّ وَجَلَّ کی معرفت حاصل کرنے کی ایک حالت کا نام ہے،   یعنی بندے پر اللہ عَزَّ وَجَلَّ کی خشیت طاری ہوتی ہے۔ فقہ و فہم دو الگ الگ نام ہیں   مگر دونوں   کا معنی ایک ہی ہے۔ چنانچہ اللہ عَزَّ وَجَلَّنے اپنی عطا کردہ فہم کو علم و حکمت پر فضیلت عطا فرمائی اور قضا و احکام پر افہام کو بلند مرتبہ قرار دیا ہے اور ارشاد فرمایا:

فَفَهَّمْنٰهَا سُلَیْمٰنَۚ- (پ۱۷،  الانبیاء: ۷۹)

تر جمعہ ٔ کنز الایمان: ہم نے وہ معاملہ سلیمان کو سمجھادیا۔

            پس اللہ عَزَّ وَجَلَّنے حضرت سیِّدُنا سلیمان عَلٰی نَبِیِّنَاوَعَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کو فہم عطا فرما کر منفرد حیثیت دی اور یہ اللہ عَزَّ وَجَلَّ ہی ہے جس نے پہلے حضرت سیِّدُنا سلیمان عَلَیْہِ السَّلَام اور ان کے والد ماجد حضرت سیِّدُنا داود عَلَیْہِ السَّلَام دونوں   کو علم و حکمت عطا فرمائی اور پھر اس کے بعد بیٹے کو باپ پر علمِ قضا میں   مزید فضیلت عطا کی۔

علمائے حق کی شان: 

            امیر المومنین حضرت سیِّدُنا علی المرتضیٰ کَرَّمَ اللہُ تَعَالٰی وَجْہَہُ الْکَرِیْم سے  اور حضرت سیِّدُنا حسن بن علی رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ سے  علما کی شان میں   مروی ہے کہ

مَا الْفَخْرُ اِلَّا لِاَھْلِ الْعِلْمِ اِنَّہُمْ                                                                                                                                                                                                                  عَلَی الْہُدٰی لِمَنِ اسْتَہْدٰی اَدِلَّآءُ

وَوَزْنُ کُلِّ امْرِئٍ مَّا کَانَ یُحْسِنُہٗ                                                                                                                                                                                                           وَالْجَاھِلُوْنَ لِاَھْلِ الْعِلْمِ اَعْدَآءُ

تر جمعہ :  (۱) … اہلِ علم کے سوا کسی کوفخر کرنے کا حق حاصل نہیں  ،   کیونکہ صرف وہی راہِ ہدایت پر ہیں   اور جو ان سے  رہنمائی چاہتا ہے اس کی رہنمائی کرنے والے ہیں  ۔

 (۲) … ہر آدمی کے نامۂ اعمال کا وزن اسی قدر بہتر ہو گا جس قدر وہ اسے  اچھا بنائے گا اور جاہل تو اہلِ علم کے دشمن ہوتے ہیں  ۔

            پس جو عالم ہو گا جان لے گا کہ اس علم سے  مقصود اللہ عَزَّ وَجَلَّ کی معرفت ہے،   تو اب اس سے  بڑھ کر کون فضیلت والا ہو سکتا ہے؟ اور اس کی کیا قیمت لگائی جا سکتی ہے؟ کیونکہ ہر علم کی قیمت معلوم ہوتی ہے اور ہر عالم کا وزن اس کے علم کے مطابق ہوتا ہے۔

            امام الزاہدین حضرت سیِّدُنا عبدالواحد بن زید رَحْمَۃُاللہِ تَعَالٰی عَلَیْہنے اسی مفہوم میں   ایک منظوم کلام ارشاد فرمایا ہے جس میں   انہوں  نے علمائے ربانیین کو منفرد قرار دیا اور ان کے طریقے کو ہر طریقے سے  ارفع و اعلیٰ جانا۔ چنانچہ،   

            ارشاد فرماتے ہیں  : 

اَلطُّرُقُ شَتّٰی وَطُرُقُ الْحَقِّ مُفْرِدَۃٌ                                                                                                                                                                                                                                                وَّالسَّالِكُوْنَ طَرِیْقَ الْحَقِّ اَفْرَادُ

لَایُعْرَفُوْنَ وَلَا تُسْلَكُ مَقَاصِدُھُمْ                                                                                                                                                                                                                                                  فَہُمْ عَلٰی مَہْلٍ یَّمْشُوْنَ قُصَادُ

وَالنَّاسُ فِی غَفْلَۃٍ عَمَّا یُرَادُ بِھِمْ                                                                                                                                                                                                                     فَجَلُّھُمْ عَنْ سَبِیْلِ الْحَقِّ رُقَادُ

تر جمعہ :  (۱) … راستے مختلف ہیں  ،   مگر حق کا راستہ ایک ہی ہے،   اور اس راستے پر چلنے والے بھی یکتا و منفرد ہیں  ۔

 (۲) … نہ ان کو کوئی جانتا ہے اور نہ ہی ان کے مقاصد معلوم ہوتے ہیں  ۔ پس وہ باوقار انداز میں   راہِ حق کا ارادہ کر کے چلتے ہیں   ۔

 (۳) … لوگ ان کی مراد سے  غافل ہیں   کیونکہ لوگوں   کی اکثریت حق کے راستے سے  غافل ہے۔

 



[1]    ۔ المسند للامام احمد بن حنبل، حدیث وابصۃ بن معبد، الحدیث: ۱۸۰۲۸، ج۶، ص۲۹۳ مسند ابی یعلیٰ الموصلی، مسند وابصۃ بن معبد، الحدیث: ۱۵۸۳، ج۲، ص۱۰۵



Total Pages: 332

Go To