Book Name:Qoot ul Quloob Jild 1

علم کی کلی: 

            سلف صالحین رَحِمَہُمُ اللہُ الْمُبِیْن سے  منقول ہے کہ جو عالم ہنستا ہے وہ علم کی کلی کرتا ہے۔   ([1])

علم کتابوں   میں   نہیں  ،   سینوں   میں   ہے: 

            حضرت سیِّدُنا خلیل بن احمد رَحْمَۃُاللہِ تَعَالٰی عَلَیْہ فرماتے ہیں   کہ علم وہ نہیں   جو کتابوں   کے بستوں   اور تھیلوں   میں   بند ہو بلکہ علم وہ ہے جو سینوں   میں   محفوظ اور یاد ہو۔   ([2])

استاذ او رشاگرد پر نعمت ِ کاملہ کی علامات: 

            استاذ میں   تین باتوں   کا پایا جانا شاگرد پر نعمتِ کاملہ کی علامت ہے:

             (۱)  صبر  (۲)  تواضع اور  (۳)  حسنِ خلق۔

            اسی طرح شاگرد میں   بھی تین باتوں   کا پایا جانا استاذ پر نعمتِ کاملہ کی علامت ہے:

             (۱)  عقل  (۲)  ادب اور  (۳)  حسنِ فہم۔

علم کے اوصاف ،   سلف صالحین کا طریقہ اور من گھڑت قصوں   کی مذمت عالم ربانی کے پانچ اوصاف: 

            عالم ربانی میں   پانچ اوصاف کا پایا جانا ضروری ہےیہی اوصاف علمائے آخرت کی علامات اور نشانیاں   ہیں  :

 (۱) … خشیت  (۲) … خشوع و خضوع  (۳) … تواضع  (۴) … حسنِ خلق اور  (۵) … زہد

مذکورہ اوصاف کا قرآنِ کریم میں   تذکرہ: 

            قرآنِ کریم میں   اللہ عَزَّ وَجَلَّنے یہ تمام اوصاف مختلف مقامات پر ذکر کئے ہیں  ۔ چنانچہ،   

            خشیت اور خشوع و خضوع کے اوصاف سے  متصف ہونے کے متعلق ارشادفرمایا:

 (۱) …اِنَّمَا یَخْشَى اللّٰهَ مِنْ عِبَادِهِ الْعُلَمٰٓؤُاؕ- (پ ۲۲،   فاطر: ۲۸)

تر جمعہ ٔ کنز الایمان: اللہ سے  اس کے بندوں   میں   وہی ڈرتے ہیں   جو علم والے ہیں  ۔

 (۲) …خٰشِعِیْنَ  لِلّٰهِۙ- (پ ۴،  اٰل عمران: ۱٭٭)

تر جمعہ ٔ کنز الایمان: اُن کے دل اللہ کے حضور جھکے ہوئے۔

            تواضع اور حسنِ خلق کے متعلق ارشاد فرمایا:

 (۱) …وَ اخْفِضْ جَنَاحَكَ لِلْمُؤْمِنِیْنَ (۸۸) وَ قُلْ اِنِّیْۤ اَنَا النَّذِیْرُ الْمُبِیْنُۚ (۸۹)  (پ ۱۴،   الحجر: ۸۸،  ۸٭)

تر جمعہ ٔ کنز الایمان: اور مسلمانوں   کو اپنے رحمت کے پروں   میں   لے لو اور فرماؤ کہ میں   ہی ہوں   صاف ڈر سنانے والا  (اس عذاب سے ) ۔

 (۲) …فَبِمَا  رَحْمَةٍ  مِّنَ  اللّٰهِ  لِنْتَ  لَهُمْۚ- (پ ۴،   اٰل عمران: ۱۵٭)

تر جمعہ ٔ کنز الایمان: تو کیسی کچھ اللہ کی مہربانی ہے کہ اے محبوب تم ان کے لئے نرم دل ہوئے ۔

            دنیا میں   زہد اختیار کرنے کے متعلق ارشاد فرمایا:

 (۱) …الَّذِیْنَ اُوْتُوا الْكِتٰبَ  (پ ۱۰،   التوبۃ: ۲٭)

تر جمعہ ٔ کنز الایمان: وہ جو کتاب دیئے گئے۔

 (۲) …وَیْلَكُمْ ثَوَابُ اللّٰهِ خَیْرٌ (پ ۲۰،   القصص: ۸۰)

تر جمعہ ٔ کنز الایمان: خرابی ہو تمہاری اللہ کا ثواب بہتر ہے۔

            پس جس میں   یہ اوصاف پائے جائیں  اس کا شمار علمائے کرام رَحِمَہُمُ اللہُ السَّلَام میں   ہو گا۔

دینی اور قلبی امور کے جاننے والے: 

            دین میں   مشکل مسائل پیدا ہوں   تو انہیں   ایک عالم دور کرتا ہے اور جب دل میں   مشتبہ امور سر اٹھائیں   تو ایک عارف کی ضرورت ہوتی ہے۔ چنانچہ،   

            حضرت سیِّدُنا عبد اللہ  بن مسعود رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ سے  منقول ہے کہ تم خیر و بھلائی پر ثابت قدم رہو گے جب تک کہ تم میں   سے  کسی کے دل میں   کوئی شبہ پیدا ہو اور وہ کوئی ایسا



[1]    ۔ الزھد للامام احمد بن حنبل، زھد علی بن الحسین، الحدیث: ۹۲۵، ص۱۸۷

[2]    ۔ الجامع لاخلاق الراوی ، باب حفظ الحدیث    الخ، الحدیث: ۱۷۶۰، ص۲، ص۲۵۱ بتغیر قلیل عن یموت بن المزرع



Total Pages: 332

Go To