Book Name:Jannat ka Raasta

ساتھ اِعتِکاف کا بھی ثواب پائے گا۔  (فتاویٰ رضویہ مخرجہ،  ۵ / ۶۷۴)  ایک اور جگہ فرماتے ہیں: جب مسجد میں جائے اِعتِکاف کی نِیَّت کرلے،  جب تک مسجد ہی میں رہے گا اِعتِکاف کا بھی ثواب پائے گا۔  (ایضاً ۸ / ۹۸)   اِعتِکاف کی نیّت کرناکوئی مشکِل کام نہیں،  نیَّت دِل  کے ارادہ کوکہتے ہیں،  اگر دِل  ہی میں آپ نے ارادہ کرلیاکہ میں سنّتِ اِعتِکاف کی نیّت کرتا ہوں تو یِہی کافی ہے۔

(6)     اِہْتِمَامِ تَہَجُّد

اِنْ شَآءَ اللہ عَزَّ  وَجَلَّ اجتِماع  گاہ میں آرام کرنے کی بَرَکت سے تہجد اور نفلی عِبادت کی سَعادت بھی حاصل ہوگی۔ جس کی فضیلت میں بہت سی روایات مروی ہیں۔

تہجد کی فضیلت کے متعلق چار فرامینِ مصطفےٰ

٭    جو شخص رات میں بیدار ہواور اپنے اہل کو جگائے پھر دونوں دو دو رکعت پڑھیں تو کثرت سے یاد کرنے والوں میں لکھے جائیں گے۔  (المستدرک للحاکم،  کتاب صلاۃ التطوع،  باب تودیع المنزل برکعتین،  ۱ / ۶۲۴،  حدیث: ۱۲۳۰)

٭    بے شک رات میں ایک ایسی ساعت ہے جس میں مسلمان بندہ جب اللہ عَزَّ  وَجَلَّ   سے دنیا وآخرت کی کوئی بھلائی مانگتاہے تو اللہ عَزَّ  وَجَلَّ  ا سے وہ بھلائی ضرور عطا فرماتاہے اوریہ ساعت ہر رات میں ہوتی ہے۔    (مسلم ،  کتاب صلوۃ المسافرین وقصرھا ،  با ب فی اللیل ساعۃ مستجاب فیھا الدعا ء ،  ص ۳۸۰،  حدیث: ۷۵۷)

٭    بے شک جنّت میں کچھ ایسے مَحلات ہیں جن میں آرپار نظر آتاہے،  اللہ عَزَّ  وَجَلَّ   نے وہ محلا ت ان لوگوں کیلئے تیار فرما رکھے ہیں جو محتاجوں کو کھانا کھلاتے ہیں،  سلام کو عام کرتے اور رات کو جب لوگ سورہے ہوں تو نماز پڑھتے ہیں۔  (ابن حبا ن ،  کتا ب البر والاحسان ،  باب افشا ء السلام واطعام الطعام ،   ۱ /  ۳۶۳،  حدیث: ۵۰۹)

٭    میری امت کے بہترین لوگ حامِلینِ قرآن اور رات کو جاگ کر اللہ عَزَّ  وَجَلَّ   کی عبادت کرنے والے ہیں ۔   

(الترغیب والترہیب ،  کتا ب النوافل ،  الترغیب فی قیام اللیل ،  ۱ / ۲۴۳،  حدیث:  ۲۷)

                                                                                                                                                                                                                                                                                                                  ساری رات عبادت کا ثواب                                                                                                                                                                     

پھر نمازِفجر باجماعت ادا کیجئے اور (اَلْحَمْدُ لِلّٰہ عَزَّ  وَجَلَّ اجتِماع  کی بَرَکت سے بعد نمازِ مغرب اجتِماع گاہ میں حاضرہونے کی صورت میں چونکہ عشاء کی نماز بھی باجماعت پڑھنے کی سعادت حاصل ہوچکی ہوگی لہٰذا) یوں فجر اور عشاء کی نمازیں باجماعت پڑھنا نصیب ہوں گی اور جو فجر وعشا کی نماز باجماعت پڑھتا ہے اسے پوری رات عبادت کرنے کا ثواب ملتا ہے۔مدینے کے سلطان،  سرورِذیشان صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کا فرمانِ عالیشان ہے:   ’’ جس نے عشا کی نَماز باجماعَت پڑھی اُس نے گویا آدھی رات قِیام کیا اور جس نے نَمازِ فجر بھی باجماعت ادا کی اُس نے گویا پوری رات قِیام کیا۔ ‘‘   (مسلم،  کتاب المساجدومواضع الصلاۃ،  باب فضل صلوٰۃ العشاء و الصبح فی جماعۃ،  ص ۳۲۹،  حدیث:  ۶۵۶)  اس طرح اَلْحَمْدُ لِلّٰہ عَزَّ  وَجَلَّ اجتِماع  کی بَرَکت سے ساری رات عِبادت کرنے کا ثواب حاصل ہوگا۔

اَورَادِ عَطّاریہ

رات اجتِماع  گاہ میں قیام کی صورت میں ہم وہ اوراد بھی باآسانی پڑھ سکتے ہیں جو شیخِ طریقت،  اَمِیرِ اَہلسنَّت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ نے بالخصوص شبِ جمعہ میں پڑھنے کیلئے بروز جمعرات بتاریخ۲۶ جمادی الاولیٰ۱۴۳۳؁ھ بمطابق20 اپریل 2012؁ء کو صبح ہی عطا فرمائیں ہیں:

(1)      اَلْحَمْدُ للّٰہ  (100 بار)

حضور تاجْدارِ مدینہ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کا فرمانِ باقرینہ ہے:  جو شخص 100 مرتبہ اَلْحَمْدُ لِلّٰہ  کہے اس کے لئے راہِ خدا میں تیار کئے گئے 100  گھوڑوں کا اجر ہے ۔  (شعب الایمان،  ۴ / ۹۷،  حدیث: ۴۳۹۶)

(2)                         لَا اِلٰہَ اِلَّا اللہُ       (100 بار)

مُحَمَّدٌ رَّسُوْلُ اللہ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  (3 بار)

تمام نبیوں کے سَرْوَر،  دو جہاں کے تاجْوَر صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کا فرمانِ جنّت نشان ہے: جس نے کہا :  لَا اِلٰہَ اِلَّا اللہ وہ جنّت میں داخل ہوگا ۔ (ترمذی،  کتاب الایمان،  باب ما جاء فیمن یموت ۔۔ الخ،  ۴  / ۲۹۰،  حدیث:  ۲۶۴۷)

 



Total Pages: 14

Go To