Book Name:Miraat-ul-Manajeeh Sharah Mishkaat-ul-Masabeeh jild 5

کتاب الامارۃ و القضاء

حاکم اور قاضی بننے کا بیان ۱؎

الفصل الاول

پہلی فصل

۱؎  امارت الف کے کسرہ سے امیروفرماں روا بننا یا فرماں روا بنانا اور الف کے فتحہ سے بمعنی علامت یہاں الف کے کسرہ سے ہے۔قضا بمعنی فیصلہ یہاں شرعی فیصلہ مراد ہے یا قضاء کا منصب مراد ہے۔(مرقات و اشعہ)اس باب میں وہ احادیث آئیں گی جن میں امیر (سلطان)و قاضی بنانے یا ان کی شرائط و صفات کا ذکر ہے۔

3661 -[1] (مُتَّفَقٌ عَلَيْهِ)

عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: «مَنْ أَطَاعَنِي فَقَدْ أَطَاعَ اللَّهَ وَمَنْ عَصَانِي فَقَدْ عَصَى اللَّهَ وَمَنْ يُطِعِ الْأَمِيرَ فَقَدْ أَطَاعَنِي وَمَنْ يَعْصِ الْأَمِيرَ فَقَدْ عَصَانِي وَإِنَّمَا الْإِمَامُ جُنَّةٌ يُقَاتَلُ مِنْ وَرَائِهِ وَيُتَّقَى بِهِ فَإِنْ أَمَرَ بِتَقْوَى اللَّهِ وَعَدَلَ فَإِنَّ لَهُ بِذَلِكَ أَجْرًا وَإِنْ قالَ بغَيرِه فَإِن عَلَيْهِ مِنْهُ»

روایت ہے حضرت ابوہریرہ سے فرماتے ہیں فرمایا رسول اﷲ صلی اللہ علیہ و سلم نے جس نے میری اطاعت کی اس نے اﷲ کی اطاعت کی ۱؎ اور جس نے میری نافرمانی کی اس نے اﷲ کی نافرمانی کی ۲؎ اور جس نے حاکم کی اطاعت کی اس نے میری اطاعت کی اور جس نے حاکم کی نافرمانی کی اس نے میری نافرمانی کی۳؎ امیر ڈھال ہے اس کی پناہ میں جہاد کیا جائے۴؎ اور اس کی آڑ لی جائے پھر اگر اﷲ کے ڈر کا حکم دے اور انصاف کرے تو اس کا اسے ثواب ہے ۵؎ اور اگر اس کے علاوہ کہے تو اس کا اس پر وبال ہے ۶؎ (مسلم،بخاری)

۱؎ یہ حدیث اس آیت کریمہ کی طرف اشارہ کررہی ہے"مَنْ یُّطِعِ الرَّسُوۡلَ فَقَدْ اَطَاعَ اللہَ"۔خیال رہے کہ اطاعت تو اﷲ تعالٰی کی بھی لازم ہے،رسول اﷲ صلی اللہ علیہ و سلم کی بھی اور سلطان اسلام،ماں باپ، استاذ کی بھی کہ ہر بزرگ کا فرمان لائق عمل ہے مگر عبادت صرف اﷲ تعالٰی کی ہے اور کسی کی نہیں اور اتباع صرف حضور صلی اللہ علیہ و سلم کی ہوسکتی ہے،نہ خدا تعالٰی کی نہ کسی اور بزرگ کی۔اتباع کے معنی ہیں کسی کے نقش قدم پر چلنا جو اسے کرتے ہوئے دیکھنا وہ کرنا،قرآن کریم کی اتباع مجازی ہے اسی لیے قرآن مجید میں اطاعت کے ساتھ تین ذاتوں کا ذکر ہے"اَطِیۡعُوا اللہَ وَاَطِیۡعُوا الرَّسُوۡلَ وَ اُولِی الۡاَمْرِ مِنۡکُمْ" اورعبادات کے ساتھ اﷲ تعالٰی کا ذکر ہے "اعْبُدُوا اللہَ"اور اتباع کے ساتھ صرف حضور صلی اللہ علیہ و سلم کا ذکر ہے نہ خدا تعالٰی کا نہ کسی بندے کا"فَاتَّبِعُوۡنِیۡ یُحْبِبْکُمُ اللہُیہ بھی خیال رہے کہ حضور انور صلی اللہ علیہ و سلم کی اطاعت خدا تعالٰی کی اطاعت کی طرح مطلقًا واجب ہے کہ جو بھی حکم دیں بلاوجہ پوچھے بلاوجہ سوچے سمجھے اطاعت کی جائے،دوسرے بندوں کی اطاعت واجب ہے جب کہ جائز کام کا حکم دیں خلاف شرع حکم نہ دیں،حضور کا حکم خود شریعت ہے اگر حضور نماز چھوڑنے یا نکاح نہ کرنے کا حکم دیں تو اس کے لیے وہ ہی حکم شرع ہے،دیکھو ہماری کتاب سلطنت مصطفے اور ہماری تفسیر نعیمی پارہ پنجم جہاں اس کی بہت سی آیات و احادیث پیش کی گئیں۔

۲؎ اس فرمان میں اس آیت کی طرف اشارہ ہے"وَ مَنۡ یَّعْصِ اللہَ وَ رَسُوۡلَہٗ فَاِنَّ لَہٗ نَارَ جَہَنَّمَ"۔

 



Total Pages: 807

Go To